.

حضرت سیدنا ابراہیم علیہ السلام قسط نمبر (3)



آگ گلزار بن گئی
حضرت ابراہیم ؑ کی قوم جب پوری طرح لاجواب ہوگئی تو ابراہیم ؑ کی جان کے درپے ہوگئی، اس لیے کہ ان کے ہوتے ہوئے معبودانِ باطل کی حفاظت مشکل ہے،  پھر اپنے دباؤ کا مظاہرہ کرنے آپس میں مشورہ کیا کہ اب حضرت ابراہیم ؑ کے ساتھ کیا کیا جائے؟ 
نمرود اور تمام لوگوں نےاس بات پر متفق ہوکر یہ فیصلہ کیا کہ ان کو آگ میں پھینک کر جلا دیا جائے۔ پھر اس کی تیاری میں سب سے پہلے زمین میں ایک گہرا گڑھا کھودا گیا اور لوگوں کو جنگلات سے لکڑیاں کاٹ کر لانے پر مامور کیا گیا اور اس آگ کو جلانے میں انھوں نے پورا مہینہ محنت و مشقت کی۔ 
جب لکڑیوں کا ایک انبار بن گیا تو اب اس میں آگ لگائی اور آگ بھی ایسی لگائی کہ روئے زمین پر کبھی اتنی بڑی آگ دیکھی نہیں گئی تھی، اور اس آگ کے شعلے آسمان تک جانے لگے، اور اس کے قریب جانا مشکل ہوگیا، اب لوگ پریشان ہوگئے کہ اس میں ابراہیمؑ خلیل اللہ کو کیسے ڈالا جائے؟ پھر کسی کے مشورے سے ایک منجنیق (Catapult) تیار کرائی گئی، اس میں حضرت ابراہیم ؑ کو بٹھا کر اس آگ میں پھینکا گیا، تو اس وقت حضرت ابراہیم ؑ نے صرف یہی فرمایا   ”حسبنا اللہ ونعم الوکیل“۔ 
کہتے ہیں کہ اس وقت حضرت جبرئیل ؑ آپ کے سامنے آئے اور پوچھنے لگے کہ کسی چیز کی ضرورت تو نہیں؟  اس وقت آپ نے حضرت جبرئیل ؑ کا جواب دیتے ہوئے فرمایا: ضرورت و حاجت صرف اللہ سے ہے۔ 
بارش کا فرشتہ کان لگائے تیار تھاکہ کب اللہ کا حکم ہو اور میں اس آگ پر بارش برساکر اسے ٹھنڈا کردوں، لیکن اللہ نے براہ راست آگ کو حکم دیا کہ (یٰنار کونی برداً و سلاماً علیٰ ابراہیم) اے آگ! تو ٹھنڈی ہوجا، اور ابراہیم ؑ کے لیے سلامتی کا کا باعث بن۔اللہ کے حکم پر وہ آگ ٹھندی ہوگئی اور ابراہیم ؑ کے لیے سلامتی کا ذریعہ بن گئی۔ لوگوں نے دیکھا کہ حضرت ابراہیم ؑ کو اس آگ نے کوئی نقصان نہیں پہنچایا اور حضرت ابراہیم ؑ تو بڑے خوش اور صحیح سالم تھے۔ 
آپ کو اس بات پر حیرت ہوگی کہ جب اللہ نے حضرت ابراہیم ؑ کو اس بھڑکتی ہوئی آگ سے زندہ اور صحیح سالم بلکہ خوش و خرم اور ہنستے ہوئے نکالا پھر بھی وہ قوم اللہ پر ایمان نہیں لائی، بلکہ بت پرستی ہی میں پڑے رہے۔ اگر اللہ کسی قوم کو گمراہ کرنا چاہتا ہے تو کون ہے جو اس کو روک سکتا ہے؟ اور اسی طرح کسی قوم کو ہدایت دینا چاہتا ہے تو کون ہے جو ہدایت سے روک سکتا ہے؟ ہدایت و گمراہی اللہ ہی کے ہاتھ مین ہے، وہ جس کو چاہے ہدایت دیتا ہے اور جسے چاہتا ہے گمراہ کرتا ہے۔

احمد صدیق ✒️

No comments: